1. Khatme Nubuwwat
  2. Prophethood
  3. Saturday, 25 May 2013
  4.  Subscribe via email
کیا مرزا غلام احمد قادیانی اصلی نبوت کا مدعی تھا؟
Accepted Answer
Accepted Answer Pending Moderation
0
Votes
Undo
مرزا غلام احمد قادیانی نے گو کہ بظاہر ظلیت اور بروز اور فنا فی الرسول کے الفاظ کو سپر بنا رکھا ہے مگر فی الحقیقت نبوت اصلیہ کا مدعی ہے اور بر تقدیر تسلیم فنا فی الرسول ہونے کے اس کے پھر بھی آنخضرت صلی اللی علیہ وسلم کے بعد نبی و رسول کہلوانے کا مجاز نہیں ہو سکتا

نبوت اصلیہ ہونے کا ثبوت اور اس کی تردید
Comment
There are no comments made yet.
  1. more than a month ago
  2. Prophethood
  3. # Permalink
Accepted Answer Pending Moderation
0
Votes
Undo
ایک صاحب پر ایک مخالف کی طرف سے یہ اعتراض پیش ہوا کہ جس سے تم نے بعیت کی ہے وہ نبی اور رسول ہونے کا دعوی کرتا ہے اور اس کا جواب محض انکار کے لفظ سے دیا گیا حالانکہ ایسا جواب صحیح نہیں ہے۔ حق یہ ہے کہ خدا تعالی کی وہ پاک وحی جو میرے پر نازل ہوتی ہے اس میں ایسے الفاظ رسول اور مرسل اور نبی کے موجود ہیں نہ ایک دفعہ بلکہ صد ہا دفعہ پھر کیونکر یہ جواب صحیح ہو سکتا ہے کہ ایسے الفاظ موجود نہیں ہیں

مرزا غلام احمد قادیانی ۵ نومبر ۱۹۰۱ ایک غلطی کا ازالہ صفحہ ۲ روحانی خزائن جلد ۱۸ صفحہ ۲۰۶
Attachments (1)
Comment
There are no comments made yet.
  1. more than a month ago
  2. Prophethood
  3. # 1
Accepted Answer Pending Moderation
0
Votes
Undo
خاتم النبیین اور ایسا ہی لا نبی بعدہ میں مراد نبی سے وہ انبیاء ہیں جن کی نبوت اصالتاَ ہو نہ یہ کہ بسبب کامل اتباع کے ظلی طور پر ان کو رسول اور نبی کا لقب دیا جاوے اور مرزا غلام احمد قادیانی ظلی طور پر نبوت و رسالت کا مدعی ہے۔ نہ اصالتاَ
Comment
There are no comments made yet.
  1. more than a month ago
  2. Prophethood
  3. # 2
Accepted Answer Pending Moderation
0
Votes
Undo
چنانچہ وہ مکالمات الہیہ جو براہین احمد میں شائع ہو چکی ہیں ان میں سے ایک یہ وحی اللہ ہے

هُوَ الَّذِي أَرْسَلَ رَسُولَهُ بِالْهُدَىٰ وَدِينِ الْحَقِّ لِيُظْهِرَهُ عَلَى الدِّينِ كُلِّهِ وَلَوْ كَرِهَ الْمُشْرِكُونَ

دیکھو صفحہ ۴۹۸ براہین احمدیہ
اس میں صاف طور پر اس عاجز کو رسول کر کے پکارا گیا ہے
Attachments (1)
Comment
There are no comments made yet.
  1. more than a month ago
  2. Prophethood
  3. # 3
Accepted Answer Pending Moderation
0
Votes
Undo
یہ آیت سورۃ فتح کے رکوع آخیر میں موجود ہے جس میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی رسالت اور آپ کے دین پاک کے غالب کر دینے کا ذکر ہے۔ کو ئ عاقل کیہ سکتا ہے کہ اگر کسی شخص کو خواب میں یا بیداری میں آیات مذکورہ سنائ دے جیسا کہ اکثر حفاظ کو کثرت استعمال و خیال کے سبب سے ایسا ہوا کرتا ہے، فرض کیا بذریعہ الہام ہی سہی تو کیا وہ شخص بہ شہادت اس آیت کے رسول کہلوانے کا مجاز ہے؟ ہرگز نہیں

بفرض محال اگر آیت مذکورہ کے سننے سے وہ رسول کہلوانے کا مستحق بنیں تو اسی معنی سے رسول ہوں گے جو معنی آیت مذکورہ میں مراد ہے یعنی رسول اصلی ورنہ دلیل دعوی پر منطبق نہ ہو گی کیونکہ دعوی میں رسول ظلی ہیں اور دلیل یعنی ارسل رسولہ میں رسول اصلی

نیز رسولہ سے رسول ظلی مراد لینے پر تحریف معنوی کلام الہی میں لازم آوے گی۔ لہذا استدلال بآیت مسطورہ بلند آواز سے پکار رہا ہے کہ قادیانی رسول اصلی ہونے کا مدعی ہے چنانچہ اس کا للکار کر کہلوانا بھی اسی پر شاہد ہے کیونکہ صرف فنا فی الرسول ہونا اس کا متقضی نہیں
Comment
There are no comments made yet.
  1. more than a month ago
  2. Prophethood
  3. # 4
Accepted Answer Pending Moderation
0
Votes
Undo
پھر اسی اشتہار میں لکھتے ہیں کہ اسی کتاب میں اس مکالمہ کے قریب ہے یہ وحی اللہ ہے

مُّحَمَّدٌ رَّسُولُ اللَّهِ ۚ وَالَّذِينَ مَعَهُ أَشِدَّاءُ عَلَى الْكُفَّارِ رُحَمَاءُ بَيْنَهُمْ

اس وحی الہی میں میرا نام محمد رکھا گیا اور رسول بھی
Comment
There are no comments made yet.
  1. more than a month ago
  2. Prophethood
  3. # 5
Accepted Answer Pending Moderation
0
Votes
Undo
اس وحی الہی میں الکفار کا لفظ بھی موجود ہے اس کو آپ نے نہیں لیا
Comment
There are no comments made yet.
  1. more than a month ago
  2. Prophethood
  3. # 6
Accepted Answer Pending Moderation
0
Votes
Undo
اسی اشتہار میں متصل عبارت منقولہ بالا کے لکھتے ہیں

پھر اس کے بعد اسی کتاب میں میری نسبت یہ وحی اللہ ہے
جری اللہ فی حلل الانبیاء
Comment
There are no comments made yet.
  1. more than a month ago
  2. Prophethood
  3. # 7
Accepted Answer Pending Moderation
0
Votes
Undo
یہ نئ لغت ہے جری اللہ کا ترجمہ خدا کا رسول
Comment
There are no comments made yet.
  1. more than a month ago
  2. Prophethood
  3. # 8
Accepted Answer Pending Moderation
0
Votes
Undo
پھر اسی اشتہار کے صفحہ ۲ سطر ۷ پر لکھتے ہیں

اور ہم اس آیت پر سچا اور کامل ایمان رکھتے ہیں جو فرمایا کہ

وَلَٰكِن رَّسُولَ اللَّهِ وَخَاتَمَ النَّبِيِّينَ

اور اس آیت میں ایک پشین گوئ ہے جس کی ہمارے مخالفوں کو خبر نہیں اور وہ یہ ہے کہ اللہ تعالی اس آیت میں فرماتا ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے بعد پیش گوئیوں کے دروازے قیامت تک بند کر دیے گئے۔ نبوت کی تمام کھڑکیاں بند کی گئیں مگر ایک کھڑکی سیرت صدیقی کی کھلی ہے یعنی فنا فی الرسول کی۔ جو شخص اس کھڑکی کی راہ سے خدا کے پاس آتا ہے اس پر ظلی طور پر وہی نبوت کی چادر پہنائ جاتی ہے جو نبوت محمدی کی چادر ہے اس لیے اس کا نبی ہونا غیرت کی جگہ نہیں
Attachments (1)
Comment
There are no comments made yet.
  1. more than a month ago
  2. Prophethood
  3. # 9
Accepted Answer Pending Moderation
0
Votes
Undo
پہلا سوال جواب طلب

فنا فی الرسول ہونے کا معیار اتباع کامل ہوتا ہے۔ دیکھو سیرت صدیقی، فاروقی، عثمانی، مرتضوی وغیرہ۔ اپ سب کمالات نبوت محمدیہ صلی اللہ علیہ وسلم کو تو رہنے دیجیے صرف زہد، اور فقر و فاقہ اور تفسیر دانی کے بارہ میں اپنے گریبان میں منہ ڈال کر اپنے ہی قلب سے للہ شہادت لے لیحیے

کیا ایسے ہی استنباط من القرآن کا مالک وارث النبی کہلا سکتا ہے؟ ہرگز نہیں بلکہ اس کے لیے صدیقی و فاروقی و عثمانی و مرتضوی ملکہ مہارت قرآن میں چاہیے جس سے صرف وارث النبی کہلانے کا مستحق ہو گا نہ کہ نبی و رسول

یہاں تو پلاو، قورمہ ، زردہ کے بغیر گذرتی ہی نہیں اور وہاں بیت نبوت میں یہ کیفیت تھی کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے تمام عمر میں کبھی تین دن متواتر گیہوں کی روٹی نہیں کھائ اور نہ کئ ماہ تک نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے گھر میں بوجہ نہ ہونے طعام کی آگ ہی نہیں جلی۔ فقر و فاقہ کی یہ حالت تھی کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ہمسائے انصار کھانے پینے کے لیے آپ کو دودھ یا ہریسہ دیا کرتے تھے

گاہے گاہے ایسا بھی اتفاق ہوتا رہا ہے کہ شکم مبارک میں بھوک کی وجہ سے بل پڑ جاتے تھے۔ کبھی جناب صلی اللہ علیہ وسلم کو ردی کھجور بھی میسر نہ ہوتی تھی
Comment
There are no comments made yet.
  1. more than a month ago
  2. Prophethood
  3. # 10
Accepted Answer Pending Moderation
0
Votes
Undo
حقیقتہ الوحی صفحہ ۲۲۰

ہماری معاش اور آرام کا تمام مدار ہمارے والد صاحب کی محض ایک مختصر آمدنی پر منحصر تھا اور بیرونی لوگوں میں سے ایک شخص بھی مجھے نہیں جانتا تھا اور میں ایک گمنام انسان تھا جو قادیان جیسے ویران گاوں میں زاویہ گمنامی میں پڑا ہوا تھا

حقیقتہ الوحی صفحہ ۲۲۱

میں یقیناَ کہ سکتا ہوں کہ ابتک تین لاکھ کے قریب روپیہ آ چکا ہے اور شاید اس سے زیادہ ہو اور اس آمدنی کو اس سے خیال کر لینا چاہیے کہ سالہا سال سے صرف لنگر خانہ کا ڈیڑھ ہزار روپیہ ماہوار تک خرچ ہو جاتا ہے
Attachments (2)
Comment
There are no comments made yet.
  1. more than a month ago
  2. Prophethood
  3. # 11
Accepted Answer Pending Moderation
0
Votes
Undo
ایسا بھی اتفاق ہوتا رہا ہے کہ شکم مبارک میں بھوک کی وجہ سے بل پڑ جاتے تھے۔ کبھی جناب صلی اللہ علیہ وسلم کو ردی کھجور بھی میسر نہ ہوتی تھی۔
آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے بوڑھی اور دبلی سواری پر پرانی چادر پہن کر حج ادا کیا۔ موٹا کپڑا پہنتے تھے۔ جو کی موٹی روٹی کھاتے تھے جو کہ بغیر پانی کے حلق سے نہ اترتی تھی۔ دعا یہ مانگتے تھے کہ یا اللہ آل محمد صلی اللہ علیہ وسلم کو رزق گذارہ عطا فرما یعنی اتنا رزق جس سے زندگی بسر ہو سکے۔
Comment
There are no comments made yet.
  1. more than a month ago
  2. Prophethood
  3. # 12
  • Page :
  • 1


There are no replies made for this post yet.
However, you are not allowed to reply to this post.